رحیم یارخان ۔خان پور(انوسٹی گیشن رپورٹ) ضلع بھر کے ٹریفک پولیس اہلکار ضلعی ہیڈکواٹر میں ڈی ایس پی ٹریفک کو لاکھوں روپے منتھلی دینے پر مجبور۔60 لاکھ روپے سے زیادہ ماہانہ منتھلی طے۔ڈی ایس پی چوہدری اصغر کا فرنٹ مین سی ٹو حوالدار استاد طارق ڈی ایس پی کے اختیار استعمال کرنے ٹراسفر پوسٹنگ منتھلی طے کرنے اہلکاروں سے بدزبانی کے مکمل اختیار اسی کے پاس۔ہراہلکار 10 ہزار روپے منتھلی دینے کا پابند ۔کار موٹر سائیکل اور ایل ٹی وی لائسنسز بنوانے کی لاکھوں روپے ماہانہ رشوت مقرر۔

کمپنیوں اور اڈہ منیجروں سے ماہانہ رشوت طے۔سرکاری گاڑیوں اور موٹر سائیکلوں کا پٹرول اور مینٹیننس فنڈ علاوہ۔عوامی و سماجی حلقوں کا شدید احتجاج ڈی ایس پی ٹریفک ہیڈ کواٹر رحیم یار خان کے خلاف فوری کاروائی کرنے اور اختیار کا ناجائز استعمال کرنے پر فوری کاروائی کا مطالبہ کیا ہے۔تفصیل کے مطابق چوہدری اصغر ڈی ایس پی ٹریفک ہیڈ کواٹر رحیم یار خان میں عرصہ ڈھائی سال سے تعینات ہے یہ اس کی دوسری تیسری پوسٹنگ ہے اس سے قبل موصوف پہلے بھی تعینات رہ چکا ہے۔ڈی ایس پی چوہدری اصغر نے اپنے تمام اختیارات فرنٹ میں سی ٹو حوالدار استاد طارق کو دے رکھے ہیں جو پوسٹنگ، ٹرانسفر،منتھلی طے کرنا چھوٹے بڑے اہلکاروں سے بدزبانی کرنے کے مکمل اختیار ان کے پاس ہیں۔ اپنی سیفٹی کے لیے ملازموں کا مضبوط گروپ یعنی ریڈر،لائسنس انچارچ،اور محرر اپنے خاص کماوٙ پتروں کو تعینات کررکھا ہے۔مبینہ اطلاع کے مطابق ٹریفک پولیس اہلکاروں کی کل تعداد تقریبا ،130ہے جن میں سب انسپکٹر اسسٹنٹ سب انسپکٹر حوالدار اور کانسٹیبل شامل ہیں ۔ہراہلکار 10 ہزارروپے منتھلی دیتا ہے جو ماہانہ 13لاکھ روپے بنتے ہیں۔ضلعی ہیڈ کواٹر میں 2 گاڑیاں اور 12 سے 13 سرکاری موٹرسائکل ہیں ایک ایک موٹرسائیکل سرکاری ہر تحصیل میں دیا ہوا ہے باقی تمام موٹرسائیکل چہیتوں اور کماوٙ پتروں کے کنٹرول میں استعمال ہوتے ہیں۔ کار موٹر سائیکل کے ماہانہ 200 لائسنس بنائے جاتے ہیں جن کی رشوت فی لائسنس 12 سے 13 ہزار روپے لی جاتی ہے جس کی ماہانہ رشوت کی مد میں 26لاکھ روبنتی ہے۔اور ایل ٹی وی لائسنس ماہانہ 100بنائے جاتے ہیں۔جن کی رشوت کی ایوریج رقم 20سے 22 ہزار مقرر کررکھی ہے جس کی ماہانہ رشوت 22لاکھ روپے بنتی ہے،ٹرانسپورٹ کمپنیوں الحمدگڈز سے مانہ 50 ہزار روہے چوہدری ٹرانسپورٹ کمپنی سے ماہانہ منتھی 30ہزار روپے کوکا کولا رحیم یارخان کے مین سپلائر گڈز سے 50ہزار روپے اور ملک گڈز رحیم یارخان سے 30ہزار روپے ماہانہ منتھلی مقرر ہے۔اڈہ منیجروں و دیگر ٹرانسپورٹ کمپنیوں سے 5سے 10ہزار روپے علاوہ ہیں۔یہ تمام منتھلیاں ڈی ایس پی چوہدری اصغر کا فرنٹ مین سی ٹو حوالدار استاد طارق وصول کرکے ڈی ایس پی کو پہنچاتا ہے۔منتھلی نہ دینے والے اہلکاروں کو تحصیل بدر ہیڈکواٹر پابند اور ذہنی ٹارچر کیا جاتا ہے۔عوامی وسماجی حلقوں کا شدید احتجاج ڈی ایس پی چوہدری اصغر کے خلاف فوری کاروائی کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔سینئر صحافی میاں مجیب اللہ نے جب ڈی ایس پی ٹریفک چوہدری اصغر سے موقف لینے کے لیا رابطہ کیا تو اس نے کہا کہ 20سے 25 لاکھ روپے پوسٹنگ کے لیے لاہور دینے پڑتے ہیں آپ نے میری جگہ کسی کی پوسٹنگ کروانی ہے تو جاو کرا لو۔آپ کا اگر کسی اہکار سے معاملہ ہے تو میرے دفترآجاوٙ بیٹھ کے حل کرلیتے ہیں اگر آپ نے زیادہ سوال کیے تو میں بدزبانی پراترآوٙں گا۔پھر اپنا نمبر بند کردیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں